قومی اسمبلی کا مشترکہ اجلاس، ایم این اے علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے کا مطالبہ

پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں امن و امان اور دہشت گردی، اقتصادی پالیسی، مسئلہ جموں و کشمیر، قومی اداروں کا احترام، چین پاکستان اقتصادی راہداری، آبادی میں دھماکہ، موسمیاتی تبدیلی کے اثرات اور پاکستان کی خارجہ پالیسی سمیت مختلف امور پر بحث ہوئی۔

بحث میں حصہ لیتے ہوئے سینیٹر مشتاق احمد خان نے کہا کہ خیبرپختونخوا میں دہشت گردی کے واقعات عروج پر ہیں اور متعلقہ حکام کو اس کا نوٹس لینا چاہیے تاکہ صوبے کے عوام کی جان ومال کی حفاظت کی جا سکے۔ تاہم انہوں نے کہا کہ صوبائی پولیس نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بے مثال قربانیاں دی ہیں۔ وسائل، آلات اور تربیت کی کمی کے باوجود۔ انہوں نے کہا کہ علماء کرام، سیاسی قوتوں اور خیبرپختونخوا کے عوام نے دہشت گردوں اور ان کے نظریات کو سختی سے مسترد کر دیا ہے۔

مشتاق احمد خان نے سپیکر پر زور دیا کہ وہ زیر حراست ایم این اے علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر جاری کریں۔

شازیہ مری نے کہا کہ معاشی ترقی ملک میں امن و استحکام سے جڑی ہوئی ہے جس کے لیے ہمیں دہشت گردی کا مکمل خاتمہ کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک ان کیمرہ سیشن، ملک سے عسکریت پسندی کو روکنے کے لیے ایک جامع پالیسی تیار کرنے کے لیے دہشت گردی کے خلاف سیکیورٹی ایجنسیوں کی رائے حاصل کرنے کے لیے بلایا جا سکتا ہے۔

عرفان صدیقی نے کہا کہ اسلام امن کی تلقین کرتا ہے اور دہشت گردوں کا مذہب اور اخلاقیات سے کوئی تعلق نہیں۔ انہوں نے تجویز دی کہ دہشت گردی کی لعنت سے نمٹنے کے لیے حکمت عملی تیار کرنے کے لیے دونوں ایوانوں کی ایک کمیٹی تشکیل دی جائے۔

سینیٹر حاجی ہدایت اللہ خان نے خیبرپختونخوا میں پی ٹی آئی کی سابقہ حکومت کو صوبے میں دہشت گرد عناصر کو آباد کرنے کی اجازت دینے پر تنقید کی۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی صوبائی حکومت کو تقریباً چار سو ارب روپے فراہم کیے گئے لیکن اس نے عسکریت پسندی پر قابو پانے کے لیے پولیس فورس کو اپ گریڈ کرنے کے بجائے کہیں اور فنڈز ضائع کر دیے۔

مفتی عبدالشکور نے کہا کہ عمران خان اور اس کے حواریوں نے دوست ممالک کے ساتھ پاکستان کے بین الاقوامی تعلقات کو نقصان پہنچا کر ملک میں معاشی دہشت گردی کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان نے دعویٰ کیا تھا کہ انہیں اقتدار سے بے دخل کرنے کے پیچھے امریکہ کا ہاتھ ہے لیکن اب وہ ایسی کسی بھی سازش سے واشنگٹن کو بری الذمہ قرار دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں معاشی دہشت گردی کا ذمہ دار عمران خان کو ٹھہرایا جائے۔

اس موقع پر محمد اسلم بھوتانی اور کشور زہرہ نے بھی خطاب کیا۔

پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس کل (منگل) شام چار بجے دوبارہ ہو گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں