نیب ترامیم کتنی ہی بری کیوں نہ لگیں مگر صرف یہ ثابت کرنا ہو گا کہ یہ بنیادی حقوق کے خلاف ہیں یا نہیں، سپریم کورٹ

سپریم کورٹ نے ریمارکس دیے ہے کہ قومی احتساب بیورو (نیب) ترامیم کتنی ہی بری کیوں نہ لگیں مگر صرف یہ ثابت کرنا ہو گا کہ یہ بنیادی حقوق کے خلاف ہیں یا نہیں۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں جسٹس اعجازالاحسن اور جسٹس منصور علی شاہ پر مشتمل سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے نیب ترامیم کے خلاف درخواست پر سماعت کی۔

دوران سماعت چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے وفاقی حکومت کے وکیل مخدوم علی خان سے استفسار کیا کہ کیا نیب ترامیم سے متعلق بھارتی قانون کا حوالہ دیں گے.

چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیے کہ بھارتی قانون میں احتساب کے عمل کو بنیادی انسانی حقوق سے جوڑا گیا ہے، بھارت کے مطابق قانون کی بالادستی بھی بنیادی انسانی حقوق کے زمرے میں آتا ہے۔

جسٹس منصور علی شاہ نے ریمارکس دیے کہ کیا بھارت کا نیب جیسا قانون ہے،کیا نیب جیسے قوانین جنوبی ایشیا کے کسی بھی ملک میں ہیں اور اگر نیب قانون اچھا ہے تو اس سے ملک کو کتنا فائدہ ہوا۔

جسٹس منصور علی شاہ نے کہا کہ کیا نیب قانون سے حاصل ہونے والے فائدے پر کسی آزاد ادارے نے کوئی رپورٹ بنائی ہے، کیا نیب کی کارکردگی سے حاصل ہونے والے فائدے پر کوئی رپورٹ ہے۔

وفاقی حکومت مخدوم علی خان نے دلائل دیے کہ عدالت کے تمام سوالات کا جواب تحقیق کر کے دوں گا۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے استفسار کیا کہ اگر سزا پر چھوٹ مل سکتی ہے تو کیا جرم کی شدت بھی کم کیی جا سکتی ہے۔

وکیل مخدوم علی خان نے کہا کہ عمران خان نے نیب قانون میں خود بھی ترامیم کیں اور وہ خود ان نیب ترامیم کے ایک حصے کے مصنف ہیں۔

وکیل مخدوم علی خان نے کہا کہ کبھی یہ نہیں ہوا کہ ترامیم کرنے والا شخص خود بعد میں انہیں چیلنج کرے، عمران خان نے نیب ترامیم سے متعلق پارلیمنٹ میں بحث اور ووٹ میں حصہ نہیں لیا۔

وفاقی وکیل نے کہا کہ عمران خان کیسے مفاد عامہ کے آرٹیکل 184 تھری کے تحت نیب ترامیم چیلنج کر سکتے ہیں،اگر عوامی مفاد تھا تو عمران خان نے نیب ترامیم پر پارلیمنٹ میں کوئی بل کیوں نہیں پیش کیا۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان ہمیشہ جو ان کو مناسب لگے وہ نہیں کر سکتے،عدالت قانونی نظائر کو دیکھے،عمران خان نے کہا کہ نیب ترامیم سے جرائم کا اثر ختم کیا گیا، نیب ترامیم کا ماضی سے اطلاق غلط ہے۔

وکیل مخدوم علی خان نے کہا کہ عمران خان کا کہنا ہے کہ ثبوت کا بوجھ استغاثہ پر ڈالنے سے ملزمان بری ہوں گے لیکن میں یہ ثابت کروں گا نیب ترامیم سے ایسا کچھ بھی نہیں ہوا۔

جسٹس منصور علی شاہ نے استفسار کیا کہ عدالت صرف یہ دیکھے گی کہ نیب ترامیم سے بنیادی حقوق کہاں متاثر ہوئے۔

جسٹس منصور علی شاہ نے کہا کہ نیب ترامیم کتنی ہی بری کیوں نہ لگیں مگر صرف یہ ثابت کرنا ہو گا کہ یہ بنیادی حقوق کے خلاف ہیں یا نہیں۔

وکیل مخدوم علی خان نے کہا کہ نیب قانون میں دو بار ترامیم 2019، تین بار 2021 اور ایک بار 2022 میں ہوئیں۔

بعدازاں عدالت نے کیس کی مزید سماعت 23 فروری تک ملتوی کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں