سپریم کورٹ کا تاریخی فیصلہ،ڈپٹی سپیکر کی رولنگ غیرآئینی قرا،قومی اسمبلی اور کابینہ کو بحال کردیا،تحریک عدم اعتماد کی ووٹنگ کیلئے 9اپریل کو اجلاس بلانے کی ہدایت

اسلام آباد(سی این پی) سپریم کورٹ آف پاکستان نے ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ کو غیر آ ئینی قرار دیتے ہوئے قومی اسمبلی اور کابینہ کو تین اپریل حیثیت سے بحال کردیا جبکہ عدم اعتماد ووٹنگ کے لیے اجلاس بلانے کی ہدایت بھی کردی۔ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں 5 رکنی لارجر بینچ نے چار روز سماعت کے بعد از خود نوٹس کیس کا محفوظ فیصلہ جاری کیا۔ لارجر بینچ نے ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ کو کالعدم قرار دیا اور وزیراعظم کی قومی اسمبلی توڑنے کی سفارش جبکہ صدر مملکت کے اسمبلی تحلیل کرنے کے حکم کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے اسے تین اپریل کی صورت بحال کردیا۔سپریم کورٹ نے قومی اسمبلی کا اجلاس 9 اپریل 2022 کو بلانے کی ہدایت کرتے ہوئے تحریک عدم اعتماد کی کارروائی جاری رکھنے کا حکم بھی دیا اور ہدایت کی کہ اگر عدم اعتماد کامیاب ہوجاتی ہے تو قومی اسمبلی نئے وزیراعظم کا انتخاب کرے اور اگر ناکام ہوتی ہے تو عمران خان بطور وزیراعظم اپنا کام جاری رکھ سکیں گے۔مختصر فیصلے میں کہا گیا ہے کہ آرٹیکل 63 اے پر عدالتی فیصلے کا کوئی اثر نہیں پڑے گا، حکومت کسی صورت اراکین کو ووٹ ڈالنے سے نہیں روک سکتی۔ سپریم کورٹ کے فیصلے میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم اسمبلی تحلیل کرنے کے اہل نہیں تھے لہذا ایوان کو بحال کیا جائے اور اسپیکر ہفتے کو دوبارہ اجلاس طلب کریں۔ عدم اعتماد کامیاب ہو تو فوری نئے وزیراعظم کا الیکشن کرایا جائے۔ از خودنوٹس کیس کی سماعت چیف جسٹس ،جسٹس عمر عطاءبندیال کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ نے کی۔ جمعرات کو صدر مملکت کے وکیل علی ظفر،سپیکر کے وکیل نعیم بخاری،وزیر اعظم کے وکیل امتیاز صدیقی ،اٹارنی جنرل آف پاکستان نے اپنے دلائل مکمل کئے۔جواب الجواب میں مسلم لیگ ن کے وکیل مخدوم علی خان نے بھی اپنی گزارشات عدالت کے سامنے رکھیں۔جبکہ عدالت عظمیٰ نے فیصلہ محفوظ بنانے کے پہلے اپوزیشن لیڈر شہباز شریف،اور پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زرداری کو بھی روسٹرم پر آ کر اپنے تحفظات پر بات کرنے کی اجازت دی۔جمعرات کو معاملہ کی سماعت ساڑھے گھنٹے دورانیہ طویل رہی۔سماعت کے دوران ججز نے دو دفعہ بیس بیس منٹ کا وقفہ بھی کیا۔چیف جسٹس آف پاکستان نے دوران سماعت ریمارکس دیئے کہ دیکھنا ہے اسمبلی تحلیل اور سپیکر رولنگ میں کتنے ٹائم کا فرق ہے،ایک بات تو نظر آ رہی ہے رولنگ غلط ہے،دیکھنا ہے اب اس سے آگے کیا ہوگا،پولیس، ایف سی اور دیگر سیکیورٹی اداروں کو الرٹ کر دیا گیاہے،قومی مفاد کو بھی ہم نے دیکھنا ہے،پنجاب اسمبلی کی معاملہ فریقین ہائی کورٹ لیکر جائیں۔ہم قومی اسمبلی کے کیس سے توجہ نہیں ہٹانا چاہتے،سمجھنا چاہتے ہیںکیا وفاقی حکومت کی تشکیل کا عمل پارلیمان کا اندرونی معاملہ ہے؟عدم اعتماد پر اگر ووٹنگ ہوجاتی تو معلوم ہوتا کہ وزیراعظم کون ہوگا؟ یہاں معاملہ حلف لینے کا نہیں رولنگ کا ہے،کہیں تو لائین ککھینچنا پڑے گے۔ بظاہر آرٹیکل 95 کی خلاف ورزی ہوئی، اگر کسی دوسرے کے پاس اکثریت ہے تو حکومت سلیکشن کا اعلان کردے، الیکشن کرانے پر قوم کے اربوں روپے خرچ ہوتے ہیں،ہر بار الیکشن سے قوم کا اربوں کا نقصان ہوگا،یہ قومی مفاد ہے،درخواست گزاروں کی جانب سے کہا گیا کہ لیو گرانٹ ہونے کے بعد رولنگ نہیں آ سکتی،درخواست گزاروں کا موقف ہے کہ 28 مارچ کو تحریک عدم اعتماد پیش ہونے سے پہلے رولنگ آ سکتی تھی، قانون یہی ہے کہ پارلیمانی کارروائی کے استحقاق کا فیصلہ عدالت کرے گی،عدالت جائزہ لے گی کہ کس حد تک کارروائی کو استحقاق حاصل ہے، ہمیں دیکھنا ہے کہ کیا ڈپٹی اسپیکر کے پاس کوئی مٹیریل دستیاب تھا جس کی بنیاد پر رولنگ دی؟کیا ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ نیک نیتی پر مبنی تھی؟ڈپٹی اسپیکر کے سامنے قومی سلامتی کمیٹی کے منٹس کب رکھے گئے؟ وزیراعظم نے آرٹیکل 58 کی حدود کو توڑا اس کے کیا نتائج ہوں گے؟ڈپٹی اسپیکر کو 28 مارچ کو ووٹنگ پر کوئی مسئلہ نہیں تھا، ووٹنگ کے دن رولنگ آئی، سپیکر نے تحریک عدم اعتماد 28 مارچ کو کیوں مسترد نہیں کی؟صدر مملکت کے وکیل علی ظفر نے اپنے دلائل میں موقف اپنایا کہ آئین کا تحفظ بھی آئین کے مطابق ہی ہو سکتا ہے، پارلیمان ناکام ہو جائے تو معاملہ عوام کے پاس ہی جاتا ہے،آئین کے تحفظ کیلئے اس کے ہر آرٹیکل کو مدنظر رکھنا ہوتا ہے،اگر ججز کے آپس میں اختلاف ہو تو کیا پارلیمنٹ مداخلت کر سکتی ہے؟ جیسے پارلیمنٹ مداخلت نہیں کرسکتی ویسے عدلیہ بھی نہیں کرسکتی،حکومت کی تشکیل اور اسمبلی کی تحلیل کا عدالت جائزہ لے سکتی ہے،وزیراعظم کے الیکشن اور عدم اعتماد دونوں کا جائزہ عدالت نہیں لے سکتی،جب محمد خان جونیجو کی حکومت کو ختم کیا گیا تو اس معاملے میںعدالت نے جونیجو کی حکومت کے خاتمہ کو غیر آینی قرار دیا،لیکنعدالت نے اسمبلی کے خاتمہ کے بعد اقدامات کو نہیں چھیڑا،یہاں بھی اسمبلی تحلیل کرکے الیکشن کا اعلان کر دیا گیا،میری بھی یہی گزارش ہے کہ ملک میں کوئی آئینی بحران نہیں، الیکشن کا اعلان ظاہر کرتا ہے کہ حکومتی اقدام بدنیتی نہیں تھا۔وزیر اعظم کے وکیل امتیاز صدیقی نے دلائل دیئے کہ عدالت نے ماضی میں بھی پارلیمان کی کاروائی میں مداخلت نہیں،عدالت کے سامنے معاملہ ہاوس کی کاروائی کا ہے، اپوزیشن نے ڈپٹی سپیکر کی اجلاس کی صدارت پر اعتراض نہیں کیا تھا،ڈپٹی سپیکر نے اپنے ذہن کے مطابق جو بہتر سمجھا وہ فیصلہ کیا،پارلیمان کے اجلاس میں ڈپٹی سپیکر نے جو فیصلہ دیا اس پر وہ عدالت کو جوابدہ نہیں،اسپیکر کو اگر معلوم ہو کہ بیرونی فنڈنگ ہوئی یا ملکی سالمیت کو خطرہ ہے تو وہ قانون سے ہٹ کر بھی ملک کو بچائے گا،اسپیکر نے اپنے حلف کے مطابق بہتر فیصلہ کیا، اسپیکر کا فیصلہ پارلیمنٹ کا اندرونی معاملہ ہے،ارٹیل 69 کو ارٹیکل 127 سے ملاکر پڑھیں تو پارلیمانی کارروئی کومکمل تحفظ حاصل ہے، سپریم کورٹ آرٹیکل 69 کے تحت پارلیمنٹ کی کاروائی میں مداخلت نہیں کر سکتی، سپریم کورٹ آرٹیکل 69 کے تحت پارلیمنٹ کی کاروائی میں مداخلت نہیں کر سکتی، ڈپٹی سپیکر نے نیشنل سکیورٹی کمیٹی پر انحصار کیا،نیشنل سکیورٹی کمیٹی پر کوئی اثرانداز نہیں ہو سکتا،وزیراعظم نے کہا اگر بدنیت ہوتا تو اپنی حکومت ختم نہ کرتا،وزیراعظم نے کہا انتخابات پر اربوں روپے لگیں گے،وزیراعظم نے کہا ان کیخلاف عوام میں جا رہا ہوں جنہوں نے کئی سال حکومتیں کیں۔اسپیکرو ڈپٹی اسپیکر کے وکیل نعیم بخاری نے دلائل شروع کرنے سے پہلے بتاےا کہ کہ وہ بیرسٹر علی ظفر کے دلائل اڈاپٹ کرنے کے ساتھ اپنا مدعا بھی عدالت کے سامنے رکھیں گے۔انہوں نے موقف اپناےا کہ پوائنٹ آف آرڈر تحریک عدم اعتماد سمیت ہر موقع پر لیا جا سکتا ہے، اگر سپیکر پوائنٹ آف آرڈر مسترد کر دیتا کیا عدالت تب بھی مداخلت کرتی؟ پوائنٹ آف آرڈر پر سپیکر تحریک عدم اعتماد مسترد کر سکتا ہے،پہلے کبھی ایسا ہوا نہیں لیکن سپیکر کا اختیار ضرور ہے،نئے انتخابات کا اعلان ہوچکا،اب معاملے عوام کے پاس ہے،سپریم کورٹ کو اب یہ معاملہ نہیں دیکھنا چاہیئے،تحریک عدم اعتماد پیش کرنے کی منظوری کا مطلب یہ نہیں کہ مسترد نہیں ہو سکتی، عدالت بھی درخواستیں سماعت کیلئے منظور کرکے بعد میں خارج کرتی ہے،اسمبلی کارروائی شروع ہوتے ہی فواد چوہدری نے پوائنٹ آف آرڈر مانگ لیا،تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ شروع ہوجاتی تو پوائنٹ آف آرڈر نہیں لیا جا سکتا تھا،موشن اور تحریک کے الفاظ ایک ہی اصطلاح میں استعمال ہوتے ہیں،تمام اپوزیشن اراکین نے کہا سوال نہیں پوچھنے صرف ووٹنگ کرائیں، اس شور شرابے میں ڈپٹی سپیکر نے اجلاس ملتوی کر دیا،پارلیمانی کمیٹی برائے قومی سلامتی کو خط پر بریفننگ دی گئی،کمیٹی کو بتایا گیا کہ عدم اعتماد ناکام ہوئی تو نتائج اچھے نہیں ہونگے، نعیم بخاری نے اس موقع پر فواد چوہدری کا پوائنٹ آف آرڈر اور قومی سلامتی کمیٹی اجلاس کا مسودہ عدالت کو پیش کرتے ہوئے بتاےا کہپارلیمان کے اندر جو بھی ہو اسے آئینی تحفظ حاصل ہوگا،حتمی فیصلہ عدالت کا ہوگا، ہمارا موقف ہے کہ رولنگ کا جائزہ نہیں لیا جا سکتا،اسپیکر نے ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ کی توثیق کی،ایوان کے پاس رولنگ مسترد کرنے کا اختیار تھا لیکن نہیں کیا گیا، عدالت اسمبلی تحلیل کا جائزہ لے سکتی ہے،?اٹارنی جنرل آف پاکستان نے دلائل دپنائے کہ نیشنل سکیورٹی کمیٹی میٹنگ کی تفصیل کھلی عدالت میں نہیں دے سکوں گا،عدالت کسی کی وفاداری پر سوال اٹھائے بغیر بھی فیصلہ کر سکتی ہے، قومی سلامتی کمیٹی اجلاس میں انتہائی حساس نوعیت کے معاملات پر بریفننگ دی گئی،قومی سلامتی کمیٹی پر ان کیمرہ سماعت میں بریفنگ دینے پر تیار ہوں،وزیراعظم سب سے بڑے سٹیک ہولڈر ہیں اس لئے اسمبلی توڑنے کا اختیار بھی انہی کے پاس ہے، اسمبلی تحلیل کرنے کیلئے وزیراعظم کو وجوہات بتانا ضروری نہیں،وزیر اعظم کی سفارش پرصدر فیصلہ نہ کریں تو 48 گھنٹے بعد اسمبلی ازخود تحلیل ہوجائے گی، تحریک عدم اعتماد پر ووٹ ڈالنا کسی رکن کا بنیادی حق نہیں تھا،ووٹ ڈالنے کا حق آئین اور اسمبلی رولز سے مشروط ہے،سپیکر کسی رکن کو معطل کرے تو وہ بحالی کیلئے عدالت نہیں آ سکتا، تحریک عدم اعتماد سمیت تمام کارروائی رولز کے مطابق ہی ہوتی ہے،حکومت کی تشکیل ایوان میں کی جاتی ہے،آئین ارکان کی نہیں ایوان کی 5 سالہ معیاد کی بات کرتا ہے، برطانیہ میں اسمبلی تحلیل کرنے کا وزیراعظم کا آپشن ختم کردیا گیا ہے،ہمارے آئین میں وزیر اعظم کا اسمبلی تحلیل کرنے کا آپشن موجود ہے،پارلیمانی کارروائی کو مکمل ایسا استثنی نہیں سمجھتا کہ کوئی آگ کی دیوار ہے،پارلیمانی کارروائی کا کس حد تک جائزہ لیا جا سکتا ہے عدالت فیصلہ کرے گی،اگر اسپیکر کم ووٹ لینے والے کے وزیراعظم بننے کا اعلان کرے تو عدالت مداخلت کر سکتی ہے،تحریک پیش کرنے کی منظوری کیلئے 20% یعنی 68 ارکان کا ہونا ضروری نہیں،سوال یہ ہے کہ اگر 68 ارکان تحریک منظور اور اس سے زیادہ مسترد کریں تو کیا ہوگا؟ اسمبلی میں کورم پورا کرنے کیلئے 86 ارکان کی ضرورت ہوتی ہے، تحریک پیش کرنے کی منظوری کے وقت اکثریت ثابت کرنا ضروری ہےتحریک عدم اعتماد پیش ہونے کی کوئی بنیاد بتانا ضروری نہیں،تحریک پیش کرتے وقت تمام 172 لوگ سامنے آ جائیں گے،تحریک پیش کرنے اور ووٹنگ میں تین سے سات دن کا فرق بغیر وجہ نہیں،سات دن میں وزیراعظم اپنے ناراض ارکان کو منا سکتا ہے،تحریک عدم اعتماد قانونی طور پر پیش کرنے کی منظوری نہیں ہوئی، جسٹس مظہر عالم نے اس موقع پر اٹارنی جنرل کو ٹوکتے ہوئے کہا کہ اسپیکر نے قرار دیدیا کہ تحریک منظور ہوگئی آپ کیسے چیلنج کر سکتے ہیں؟جس پر اٹارنی جنرل نے موقف اپناےااسپیکر کی رولنگ چیلنج نہیں ہوسکتی تو کیس ہی ختم ہو گیا،تحریک پیش کرنے کے حق میں 161 لوگوں نے ووٹ کیا تھا،اگر 68 لوگ تحریک پیش کرنے کی منظوری اور 100 مخالفت کریں تو کیا ہوگا؟ایوان کی مجموعی رکنیت کی اکثریت ہو تو ہی تحریک پیش کرنے کی منظوری ہوسکتی،آئین میں کہیں نہیں لکھا کہ اکثریت مخالفت کرے تو تحریک مسترد ہوگی، تحریک پیش کرنے کی منظوری کا ذکر اسمبلی رولز میں ہے،تحریک عدم اعتماد نمٹانے کے بعد ہی اسمبلی تحلیل ہوئی،میں رولنگ کا دفاع نہیں کر رہا،میرے تحفظات نئے انتخابات کا ہے،سب چاہتے ہیںوزیر اعظم اراکین اسمبلی کے نہیں عوام کے منتخب کردہ ہوں،جنہوں نے عمران خان کو پلٹا ہے وہ شہباز شریف کو بخشیں گے؟ اپوزیشن کا الیکشن کا مطالبہ پورا ہو رہا ہے تو ہونے دیں، مخدوم علی خان نے جواب الجواب میں موقف اپنایا کہ اٹارنی جنرل کی آخری باتیں دھمکی آمیز تھیں، کون کس کو نہیں چھوڑے گا، کس کو سرپرائز دے گا یہ نہیں کہنا چاہیے،وزیراعظم نے سرپرائز دینے کا اعلان کیا تھا،عدالت سیاسی تقاریر پر نہ جائے،حاجی سیف اللہ کیس امتیازی کیس ہے، یہ نہیں ہو سکتا کہ رولنگ ختم ہو اسمبلی بحال نہ ہو، اس رولنگ کے بعد اقدامات کی توثیق کی تو ایک پیغام جائے گا،پیغام جائے گا پلگ نکال دو تاکہ دوسرا نہ آ سکے،تین اسمبلیوں میں پی ٹی آئی کی حکومت ہے، صوبائی حکومتیں رکھتے ہوئے انتخابات کیسے شفاف ہونگے؟ صدر نے سپیکر کی ملی بھگت سے سمری منظور کی۔چیف جسٹس نے قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف کو بات کرنے کی اجازت دی تو انہوں غداری کے الزام کیساتھ الیکشن کیسے لڑیں گے، ہم اس الزام کیساتھ گھر والوں کا سامنا نہیں کر سکتے، سازش کے ثبوت لے آئیں عدالت کی ہر سزا قبول کرتے ہوئے سیاست چھوڑ دونگا۔ شہباز شریف نے کہا کہ عام آدمی ہوں قانونی بات نہیں کروں گا، عدالت کے سامنے پیش ہونا میرے لئے اعزاز ہے،رولنگ ختم ہونے پر تحریک عدم اعتماد بحال ہو جائے گی،سپیکر کی رولنگ کالعدم ہو تو اسمبلی کی تحلیل ازخود ختم ہوجائے گی،ہماری تاریخ میں آئین کئی مرتبہ پامال ہوا،جو بلنڈر ہوئے انکی توثیق اور سزا نہ دیے جانے کی وجہ سے یہ حال ہوا،عدالت اللہ اور پاکستان کے نام پر پارلیمنٹ کو بحال کرے، پارلیمنٹ کا عدم اعتماد پر
ووٹ کرنے دیا جائے،حکومت 174 ووٹوں پر قائم تھی، ہمارے پاس   177 ممبران  ہیں، آئین کی بحالی اور عوام کیلئے اپنا خون پسینہ بہائیں گے، بطور اپوزیشن لیڈر چارٹر آف اکانومی پیش کش کی، 2018 میں ڈالر 125 روپے کا تھا،اب ڈالر 190 تک پہنچ چکا ہے، پارلیمنٹ کو اس کا کام کرنا چاہیے، پارلیمنٹ ارکان کو فیصلہ کرنے دینا چاہئے،پی ٹی آئی نے بھی اتحادیوں کے ساتھ مل کر حکومت بنائی تھی،اپنی پہلی تقریر میں چارٹر آف اکانومی کی بات کی تھی،عوام بھوکی ہو تو ملک کو قائد کا پاکستان کیسے کہیں گے، مطمئن ضمیر کیساتھ قبر میں جاو¿ں گا،سیاسی الزام تراشی نہیں کروں گا، آج بھی کہتا ہوں چارٹر آف اکانومی پر دستخط کریں۔حکومت 174 ووٹوں پر قائم تھی ہمارے ممبر 177 ہیں،آئین کی بحالی اور عوام کیلئے اپنا خون پسینہ بہائیں گے، چیف جسٹس نے اس موقع پر شہباز شریف سے استفسار کیا کہ2013 کے الیکشن میں آپ کی کتنی نشستیں تھیں؟جس پر شہباز شریف نے بتاےا کہ گزشتہ انتخابات میں 150 سے زائد نشستیں تھیں،ڈیڑھ سال پارلیمنٹ کا ابھی باقی ہے،اپنی اپوزیشن سے ملکر انتخابی اصلاحات کرینگے تاکہ شفاف الیکشن ہو سکے،عام آدمی تباہ ہوگیا اس کیلئے ریلیف پیدا کرنے کی کوشش کرینگے۔ عدالتی فیصلے کے مطابق عمران خان بطور وزیراعظم جبکہ ا±ن کی کابینہ کے اراکین کی حیثیت بھی بحال ہوگئی، اسی طرح معاونین اور مشیر بھی عہدوں پر بحال ہوگئے۔فیصلے کے تناظر میں سپریم کورٹ کی اندرونی اور بیرونی سیکیورٹی کو انتہائی سخت کیا گیا، کمرہ عدالت میں مخصوص افراد کے علاوہ کسی بھی غیر متعلقہ شخص کو داخلے کی اجازت نہیں دی گئی۔

IN THE SUPREME COURT OF PAKISTAN

(Original Jurisdiction)

 

 

PRESENT:

Mr. Justice Umar Ata Bandial, CJ

Mr. Justice Ijaz ul Ahsan

Mr. Justice Mazhar Alam Khan Miankhel

Mr. Justice Munib Akhtar

Mr. Justice Jamal Khan Mandokhail

 

SUO MOTO CASE NO.1 OF 2022

(Re: ruling by the Deputy Speaker of the National Assembly under Article 5 of the Constitution qua voting on No-confidence Motion against the Prime Minister of Pakistan)

Constitution Petition No.3 to 7 of 2022

(Re: ruling passed on 03.04.2022 by the Deputy Speaker of the National Assembly on No-confidence Motion)

 

 

 

 

Pakistan Peoples Party Parliamentarians (PPPP) through its Secretary General

Mr. Farhatullah Babar and others

(in Const. P.3/2022)

Supreme Court Bar Association of Pakistan through its President, Islamabad

(in Const. P.4/2022)

Pakistan Muslim League-N through its representative Malik Ahmed Khan

(in Const. P.5/2022)

Sindh High Court Bar Association through its Hon. Secretary, Karachi

(in Const. P.6/2022)

Sindh Bar Council through its Secretary, High Court Building, Karachi

(in Const. P.7/2022)

…Petitioner(s)
   
Versus
Federation of Pakistan through Secretary M/o Law and Justice Islamabad and others

(in Const. P. 3/2022)

President of Pakistan through Secretary to the President, Islamabad and others

(in Const. P. 4/2022)

Deputy Speaker of the Provincial Assembly of the Punjab and others

(in Const. P. 5/2022)

Federation of Pakistan through the Secretary, Islamabad and others

(in Const.P.6/2022)

Federation of Pakistan through the Secretary, Islamabad and others

(in Const. P. 7/2022)

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

…Respondent(s)

For Federation : Mr. Khalid Javed Khan,
Attorney General for Pakistan

Mr. Sohail Mehmood, Addl. AGP

Assisted by:

Mr. M. Usman Piracha, Adv,

Ms. Mayam Rasheed, Adv.

Ms.Faryal Shah Afridi, Adv.

     
For the President : S. Ali Zafar, ASC

S. M. Ali Bokhari, ASC

Mr. Ahmed Nawaz Ch. AOR

     
For Prime Minister : Mr. Imtiaz Rasheed Siddiqui, ASC

Mr. Faisal Fareed, ASC

S. Hasnain Ibrahim Kazmi, ASC

Assisted by Ch. Atif Khan, Advocate

     
For ECP : Mr. Sikandar Sultan Raja, CEC

Mr. Omer Hameed Khan, Secretary

Mr. Zafar Iqbal, Spl. Secretary

Mr. Muhammad Arshad, DG (L)

Mr. Khurram Shahzad, ADG(L)

     
For SCBA : (SMC 1 & Const.P.4/22)

Mr. Mansoor Usman Awan, ASC

Mr. Ahsan Bhoon, ASC (President)

Mr. Waseem Mumtaz Malik, ASC (Secretary)

Mr. Khawar Ikram Bhatti, ASC

S. Rifaqat Hussain Shah, AOR

Assisted by: Mr. Umair Ahmed, Adv.

Asfand Yar Khan, Adv.

     
For PPPP : (SMC 1 & Const.P.3/22)

Mr. Farooq H. Naek, Sr. ASC

Mr. Bilawal Bhutto Zardari

Mian Raza Rabbani, ASC

Mr. Kamran Murtaza, Sr. ASC

Mr. Azam Nazir Tarar, ASC

Raja Shafqat Abbasi, ASC

Sardar M. Latif Khan Khosa, Sr. ASC

Sardar Shahbaz Ali Khan Khosa, ASC

S. Rifaqat Hussain Shah, ASC

Assisted by:

Barrister Shiraz Shaukat Rajpar

     
For BNP (M) : Mr. Mustafa Ramday, ASC

Mr. Rashid Hafeez, ASC

assisted by:

Mr. Ahmed Javaid, Advocate

Mr. Akbar Khan, Advocate

Ms. Zoe Khan, Adv.

     
For ANP : Mr. Babar Yousafzai, ASC

Mr. M. Sharif Janjua, AOR

     
For PML(N) : (SMC 1/2022)

Mr. Makhdoom Ali Khan, Sr. ASC

Mian Shahbaz Sharif

(Opposition Leader)

Assisted by:

Mr. Saad M. Hashmi, Adv.

Mr. Sarmad Hani, Adv.

Mr. Yawar Mukhtar, Adv.

Mr. Ammar Cheema, Adv.

(Const. P. 5/2022)

Ch. Sultan Mehmood, ASC

Mr. Khalid Ishaq, ASC

Mr. Azam Nazir Tarar, ASC

S. Rifaqat Hussain Shah, AOR

     
For PML : Mr. Imtiaz Rasheed Siddiqui, ASC

S. Hasnain Ibrahim Kazmi, ASC

Mr. Ahmed Nawaz Ch. AOR

     
For PTI : Dr. Babar Awan, Sr. ASC

Mr. Azhar Siddiqui, ASC

Mr. Ahmed Nawaz Ch. AOR

For JUP : Mr. Kamran Murtaza, Sr. ASC

Qari Abdul Rasheed, ASC

     
For Dy. Speaker, NA : Mr. Naeem Bokhari, ASC

Mr. Anis M. Shahzad, AOR

  :  
For Sindh : Mr. Salman Talibuddin, AG

(V.L. Karachi)

Mr. Sibtain Mehmood, Addl. AG

(V.L. Karachi)

Mr. Fawzi Zafar, Addl. AG

(V.L. Karachi)

     
For Punjab : Mr. Ahmed Awais, AG Punjab
     
For Balochistan : Mr. Asif Reki, AG

Mr. M. Ayaz Sawati, Addl. AG

     
For KP : Mr. Shumial Butt, AG

Mian Shafaqat Jan, Addl. AG

Mr. Atif Ali Khan, Addl. AG

     
For ICT : Mr. Niazullah Khan Niazi, AG
     
For M/o Interior : Mr. M. Ayub, Addl. Secretary

Mr. M. Naeem Saleem, Dy. Secretary

     
For NA : Mr. Abdul Latif Yousafzai, ASC

Mr. M. Mushtaq, Addl. Secretary

Mr. Haq Nawaz, SO

     
For SHCBA & SBC : Const.P. 6 & 7/2022

Mr. Salahuddin Ahmed, ASC

Mr. Haider Imam Rizvi, ASC

Mr. Anis Muhammad Shahzad, AOR

     
Date of Hearing : 07.03.2022

O R D E R

 

For detailed reasons to be recorded later and subject to what is set out therein by way of amplification or otherwise, these matters are disposed of in the following terms:

  1.          The ruling of the Deputy Speaker of the National Assembly (“Assembly”) given on the floor of the House on 03.04.2022 (“Ruling”) in relation to the resolution for a vote of no-confidence against the Prime Minister under Article 95 of the Constitution (“Resolution”) (for which notice had been given by the requisite number of members of the Assembly on 08.03.2022, and in relation to which leave was granted to move the Resolution on 28.03.2022), and the detailed reasons for the Ruling (released subsequently and concurred with by the Speaker) are declared to be contrary to the Constitution and the law and of no legal effect, and the same are hereby set aside.
  2.          In consequence of the foregoing, it is declared that the Resolution was pending and subsisting at all times and continues to so remain pending and subsisting.
  3. In consequence of the foregoing, it is declared that at all material times the Prime Minister was under the bar imposed by the Explanation to clause (1) of Article 58 of the Constitution and continues to remain so restricted. He could not therefore have at any time advised the President to dissolve the Assembly as contemplated by clause (1) of Article 58.
  4.          In consequence of the foregoing, it is declared that the advice tendered by the Prime Minister on or about 03.04.2022 to the President to dissolve the Assembly was contrary to the Constitution and of no legal effect.
  5.          In consequence of the foregoing, it is declared that the Order of the President issued on or about 03.04.2022 dissolving the Assembly was contrary to the Constitution and of no legal effect, and it is hereby set aside. It is further declared that the Assembly was in existence at all times, and continues to remain and be so.
  6.          In consequence of the foregoing, it is declared that all actions, acts or proceedings initiated, done or taken by reason of, or to give effect to, the aforementioned Order of the President and/or for purposes of holding a General Election to elect a new Assembly, including but not limited to the appointment of a care-taker Prime Minister and Cabinet are of no legal effect and are hereby quashed.
  1.          In consequence of the foregoing, it is declared that the Prime Minister and Federal Ministers, Ministers of State, Advisers, etc stand restored to their respective offices as on 03.04.2022.
  2.          It is declared that the Assembly was at all times, and continues to remain, in session as summoned by the Speaker on 20.03.2022 for 25.03.2022 (“Session”), on the requisition moved by the requisite number of members of the Assembly on 08.03.2022 in terms of clause (3) of Article 54 of the Constitution. Any prorogation of the Assembly by the Speaker prior to its dissolution in terms as stated above is declared to be of no legal effect and is set aside.
  3.          The Speaker is under a duty to summon and hold a sitting of the Assembly in the present Session, and shall do so immediately and in any case not later than 10:30 a.m. on Saturday 09.04.2022, to conduct the business of the House as per the Orders of the Day that had been issued for 03.04.2022 and in terms as stated in, and required by, Article 95 of the Constitution read with Rule 37 of the Rules of Procedure and Conduct of Business in the National Assembly Rules, 2007 (“Rules”).
  1.          The Speaker shall not, in exercise of his powers under clause (3) Article 54 of the Constitution, prorogue the Assembly and bring the Session to an end, except as follows:
    1. If the Resolution is not passed by the requisite majority (i.e., the no-confidence resolution is defeated), then at any time thereafter;
    2. If the Resolution is passed by the requisite majority (i.e., the no-confidence resolution is successful), then at any time once a Prime Minister is elected in terms of Article 91 of the Constitution read with Rule 32 of the Rules and enters upon his office.
  1. If the Resolution is passed by the requisite majority (i.e., the no-confidence resolution is successful) then the Assembly shall forthwith, and in its present Session, proceed to elect a Prime Minister in terms of Article 91 of the Constitution read with Rule 32 of the Rules and all other enabling provisions and powers in this behalf and the Speaker and all other persons, including the Federal Government, are under a duty to ensure that the orders and directions hereby given are speedily complied with and given effect to.
  2.          The assurance given by the learned Attorney General on behalf of the Federal Government in C.P. 2/2022 on 21.03.2022 and incorporated in the order made in that matter on the said date shall apply as the order of the Court: the Federal Government shall not in any manner hinder or obstruct, or interfere with, any members of the National Assembly who wish to attend the session summoned as above, and to participate in, and cast their votes, on the no confidence resolution. It is further directed that this order of the Court shall apply both in relation to the voting on the Resolution and (if such be the case) in relation to the election of a Prime Minister thereafter. It is however clarified that nothing in this Short Order shall affect the operation of Article 63A of the Constitution and consequences thereof in relation to any member of the Assembly if he votes on the Resolution or (if such be the case) the election of a Prime Minister thereafter in such manner as is tantamount to his defection from the political party to which he belongs within the meaning of the said Article.
  3.          The order of the Court made in SMC 1/2022 on 03.04.2022 to the following effect, i.e., “Any order by the Prime Minister and the President shall be subject to the order of this Court” shall continue to be operative and remain in the field, subject to this amplification that it shall apply also to the Speaker till the aforesaid actions are completed.

 

         

  CHIEF JUSTICE

 

 

 

  JUDGE

 

 

   
  JUDGE

 

 

   
  JUDGE

 

 

   
   
 

Islamabad

07.04.2022

JUDGE

APPROVED FOR REPORTING.

اپنا تبصرہ بھیجیں