سی ای ایم بی، لاہور، پاکستان میں زراعت اور ہیلتھ سائنسز کی مالیکیولر بائیولوجی میں پیشرفت پر چوتھے بین الاقوامی سمپوزیم کا افتتاح،جین ایڈیٹنگ ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے فصلوں کو بہتر بنانے کے لیے درست سمت میں گامزن ہے: فخر امام

اسلام آباد(سی این پی) وفاقی وزیر سید فخر امام اور پنجاب کے صوبائی وزیر سید حسنین جہانیہ گردیزی نے وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر نیاز احمد اختر کے ہمراہ پاکستان کے سب سے بڑے دو روزہ بین الاقوامی سمپوزیم ایڈوانسز ان مالیکیولر بائیولوجی آف ایگریکلچر اینڈ ہیلتھ سائنسز کا افتتاح کیا۔ اس موقع پر ملکی اور بین الاقوامی نامور سائنسدان موجود تھے۔ اس موقع پر مہمان خصوصی سید فخر امام نے کہا کہ CEMB جین ایڈیٹنگ ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے فصلوں کو بہتر بنانے کے لیے درست سمت میں گامزن ہے، کیونکہ زراعت کا ملک کے جی ڈی پی پر براہ راست اثر پڑتا ہے۔ صوبائی وزیر زراعت پنجاب سید حسنین جہانیہ گردیزی نے ایگریکلچر اینڈ ہیلتھ سائنسز کے شعبے میں بہتری کے لیے سی ای ایم بی کے سائنسدانوں کی محنت کو سراہا۔ انہوں نے سائنس اور ٹیکنالوجی کے فروغ کے لیے حکومت کی مکمل حمایت کو یقینی بنایا۔ وائس چانسلر، پنجاب یونیورسٹی، پروفیسر ڈاکٹر نیاز احمد اختر نے میگا ایونٹ کے انعقاد پر سی ای ایم بی کے سائنسدانوں اور عملے کی کاوشوں کو سراہا۔ انہوں نے عام آدمی کی سماجی و اقتصادی حالت کو بہتر بنانے کے لیے محققین کی محنت کی ضرورت پر زور دیا۔
ڈائریکٹر سی ای ایم بی، پروفیسر ڈاکٹر احمد علی شاہد نے پاکستان بھر سے آئے ہوئے معزز مہمانوں، فیکلٹی ممبران اور 300 سے زائد سائنسدانوں کو خوش آمدید کہا۔ اپنے ابتدائی کلمات میں انہوں نے 36 سال کے سفر کے دوران CEMB کی کامیابیوں پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے سامعین کو CEMB کی تیار کردہ CKC2، CEMB 33 اور CA 12 کپاس کی اقسام کے امید افزا فیلڈ نتائج اور مختلف قومی اور بین الاقوامی سیڈ کمپنیوں کے ساتھ ان اقسام کی کمرشلائزیشن کی کوششوں کے بارے میں آگاہ کیا۔ مزید انہوں نے GMO ٹیسٹنگ کے لیے تصدیق شدہ لیبارٹریز اور CEMB کی تیار کردہ مصنوعات جیسے کہ آنکھوں کے لیے اسٹیم سیلز پر مبنی علاج اور بہت سی انسانی بیماریوں کے لیے تشخیصی کٹس کے بارے میں بات کی۔ افتتاحی سیشن کا اختتام ڈائریکٹر سی ای ایم بی پروفیسر ڈاکٹر احمد علی شاہد کی طرف سے معزز مہمانوں میں شیلڈز کی تقسیم پر ہوا۔
بعد ازاں پانچ تکنیکی سیشنز کے دوران امریکہ، ترکی، ملائیشیا، قازقستان، ایران، جرمنی، چین، برازیل، نیپال کے بین الاقوامی محققین اور چھبیس یونیورسٹیوں کے قومی محققین نے اپنی گفتگو کی اور اپنے تحقیقی تجربات سے آگاہ کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں