پی آئی ایم ای سی 2023: سینیٹر مشاہد کی ‘بلیو اکانومی کو فروغ دینے کے لیے 5 نکاتی ایکشن پلان’ کی تجویز

پاکستان انٹرنیشنل میری ٹائم ایکسپو اینڈ کانفرنس (پی آئی ایم ای سی) 2023 کے دو سیشنز کی صدارت کرتے ہوئے سینیٹ کی دفاعی کمیٹی کے چیئرمین سینیٹر مشاہد حسین نے بلیو اکانومی کے فروغ کے لیے 5 نکاتی ایکشن پلان کی تجویز پیش کی۔ انہوں نے کہا کہ بلیو اکانومی سمندری اور معدنی وسائل کے علاوہ سی پیک اور پاکستان، چین اور سعودی عرب کے درمیان اسٹریٹجک پارٹنرشپ کی تعمیر ایک متبادل ترقیاتی نقطہ نظر کے لیے ایک اہم پیش رفت ثابت ہو گی جو ‘آئی ایم ایف کو خیر باد’ کہنے میں مددگار ثابت ہو سکتی ہے۔
پاک بحریہ کے سربراہ ایڈمرل امجد خان نیازی، وائس چیف آف نیول اسٹاف وائس ایڈمرل فیصل رسول لودھی اور پاک بحریہ کے دیگر سینئر افسران کے علاوہ پی آئی ایم ای سی میں شریک 50 ممالک کے نمائندے بھی موجود تھے۔


اپنی پریزنٹیشن کا خاکہ پیش کرتے ہوئے سینیٹر مشاہد حسین نے کہا کہ ‘اب یہ واضح ہو گیا ہے کہ پاکستان ترقی کی درست سمت پر گامزن نہیں، اپنی خودمختاری سے دستبردار ہو رہا ہے اور صرف آئی ایم ایف پر مستقل انحصار بڑھا رہا ہے، کیونکہ معاشی خود مختاری ہی سیاسی آزادی کی اہم بنیاد ہے’۔ انہوں نے مزید کہا کہ ‘یہ کیسی معاشی حکمت عملی ہے کہ ہم قرضوں کی واپسی کے لیے قرضے مانگتے ہیں، اپنے ہی لوگوں پر مزید ٹیکسوں کا بوجھ ڈالتے ہیں اور مہنگائی کو بڑھاتے ہیں’۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ پاکستانی عوام کی خاطر ’پاکستان کی اقتصادی ترقی کی حکمت عملی کے کورس کی اصلاح‘ کی فوری ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کا درست راستہ یہ ہے کہ بلیو اکانومی کے لیے حکمت عملی کے ذریعے سمندری وسائل کی تلاش اور ان سے استفادہ کرنے پر توجہ مرکوز کی جائے، جس کے مطابق، عالمی بینک کے پاس کم از کم 100 ارب ڈالرکے وسائل ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ 2015 میں پاکستان کے براعظمی شیلف میں 50,000 مربع کلومیٹر کو ایک خصوصی اقتصادی زون کے طور پر شامل کیا گیا، پانی کا ایک بہت بڑا ذخیرہ، تقریباً 5ویں صوبے کی طرح ہے۔ اس سمندری معیشت میں تھر میں بے تحاشہ معدنی دولت، قدرتی گیس کے وسیع ذخائر اور 175 ارب ٹن کوئلے کا اضافہ ہے، یہ سب مجموعی طور پر تقریباً ایک کھرب ڈالر (ایک کھرب ڈالر) کی پوشیدہ دولت میں اضافہ کرتے ہیں ان علاقوں پر پالیسی کی عدم موجودگی کی وجہ سے بالکل بھی استفادہ نہیں کیا گیا ہے۔

اس کے بعد سینیٹر مشاہد حسین نے 5 نکاتی ایکشن پلان کے ذریعے متبادل اقتصادی ترقی کی حکمت عملی تیار کرنے پر زور دیا۔ سب سے پہلے، حکومت کو چاہیے کہ وہ فوری طور پر ایک نیشنل اتھارٹی فار بلیو اکانومی (این اے بی ای) قائم کرے، تاکہ ایک جامع حکمت عملی تیار کی جا سکے جس میں پاکستان نیوی، میری ٹائم افیئرز کی وزارت اور پرائیویٹ سیکٹر بطور پرنسپل سٹیک ہولڈرز شامل ہوں۔ دوسرا، وزارت بحری امور میں ایک سیکرٹری ہونا چاہئے، جو پاکستان نیوی سے ہو، جیسا کہ وزارت دفاع میں پاک فوج کا ایک سیکرٹری ہو۔یہ وزارت سمندری امور کو بلیو اکانومی میں ایک فعال اور اہم پلیئر بنائے گی۔ تیسرا، ماہرین، ماہرین تعلیم، تھنک ٹینکس اور متعلقہ پرائیویٹ سیکٹر پر مشتمل ایک خصوصی غیر سرکاری ٹاسک فورس کا قیام عمل میں لایا جائے جو کہ 2023 میں ایک ورک پلان وضع کرے تاکہ رائے عامہ کے رہنماؤں اور متعلقہ اسٹیک ہولڈرز کے درمیان بلیو اکانومی کے بارے میں آگاہی کو فروغ دیا جا سکے۔ چوتھا، پاکستان کے لیے متبادل اقتصادی ترقی کی حکمت عملی کے ایک حصے کے طور پر، بلیو اکانومی، سمندری اور معدنی وسائل، سی پیک، ٹی اے پی آئی اور پاکستان، چین اور سعودی عرب کے درمیان سہ رخی تعلقات کو فروغ دینا، تاکہ انرجی سیکیورٹی بلیو اکانومی کا ایک اہم ستون بن جائے۔ پانچواں، میڈیا موبلائزیشن بلیو اکانومی کو فروغ دینے کے لیے ایک قوت کا ضامن ہے اور اس سلسلے میں گوادر، اورماڑہ، کیٹی بندر اور کراچی میں میڈیا ورکشاپس کا انعقاد کیا جائے، تاکہ ’سمندری بلائنڈنس‘ بلیو اکانومی کے مستقبل کے امکانات کے بارے میں آگاہی پیدا ہو۔سینیٹر مشاہد حسین نے مزید کہا کہ بلیو اکانومی کے لیے اس بلیو پرنٹ کو اپنانے سے پاکستان کو اپنے پاؤں پر کھڑا ہونے اور آئی ایم ایف کو خیر باد کہنے میں مدد فراہم کرے گی۔ ہم 60 سالوں میں 23 بار آئی ایم ایف کے پاس گئے ہیں اور یہ ایک آزمایا ہوا، آزمایا ہوا اور ناکام فارمولا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں